Urdu Poetry

 

زندگی اْداس تو نہیں ہے،

مگر مسکرانے کی وجہ بھی ہے نہیں کوئی۔

رہتے رہتے اِس دنیا میں اب ،

دل اْٹھ گیا ہے سب سے میرا۔

مدّتوں سے ہوئی میری جگ میں صبح نہیں،

بیٹھے بیٹھے یْوں میری جگ ہے قصْہ تمام میں۔

میں سوچتی ہوں سحروشام وصل و ہجر،

کیا خوب ہو اگر مداوا دْکھوں کا کردے کوئی۔

ہم برسوں کے اْداس لوگ گر کو جائیں کدھر؟

یہ ہنسی، یہ قہقیں ، یہ بے جا مسکراہٹیں۔

کبھی شیریں و دِلکش، کبھی تلخ و کڑوے،

سمجھ نہیں آتے لوگوں کے لہجے بھی کیسے کیسے۔

رنگینیاں یہ خوبصورت تو نہیں ہیں،

پر طلب آسائشیں سارے جہاں کی کوئی۔

جو میں کہوں اگر تو بدتمیز،

جو چْپ رہوں تو بے ادب کہتے ہیں۔

اْتر رہے ہیں دِل سے سب آہستہ آہستہ،

کہ اْداس روح کو نہیں جچتے یہ نئے دور کے لوگ۔

ساری رونقیں سِمٹ آئیں میری روح کی،

گر جو بہار لوٹ آئے میری کہکشاں میں کوئی۔

خود کو کروں میں اب اور کیا بیاں؟

ہم سادہ ہیں اور سادگی پر ہی مرتے ہیں۔

کرتی نہیں میں شامل خود کو لوگوں میں اْن ،

جو دوسروں کے لیئےجیتے نہیں اور خودغرض بھی خود کو کہتے نہیں۔

ڈھونڈا بہت نگر نگر ہر کْوچہ اور گلی،

میری روح کو مگر نہ مِل سکا تیرے جیسا کوئی۔

چمک لگتی نہیں اچھی اِس دنیا کی،

اور اپنی خواہشیں ہیں عروجوں پر۔

جانتے ہوئے کہ سب چھوڑ جانا ہے خالی ہاتھ،

ایک دن مجھے صرف ایک اْداس روح کے ساتھ۔

 خوش بخت اِقبال

45773041_2234638080140485_1106522753864826880_n.jpg

5 thoughts on “Urdu Poetry

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s